FREE SHIPPING | On order over Rs. 1000 within Pakistan

کلیات فراق گورکھپوری

In Stock Unavailable

sold in last hours

Regular price Rs.2,100.00 Rs.2,400.00 |  Save Rs.300.00 (12% off)

0

Spent Rs. more for free shipping

You have got FREE SHIPPING

ESTIMATED DELIVERY BETWEEN and .

PEOPLE LOOKING FOR THIS PRODUCT

PRODUCT DETAILS

کلیات فراق گورکھپوری

۷۵۲ صفحات | بڑا سائر | کامل ڈیلیکس ایڈیشن

یوں تو آئے دن چھوٹے بڑے فراقؔ کی شاعری کے ادھورے مجموعے ’’دیوانِ فراؔق‘‘ یا ’’کلیاتِ فراؔق‘‘ کے عنوان سے شائع ہوتے رہتے ہیں لیکن دنیائے شعر و ادب میں پہلی بار ’’کلیاتِ فراق گورکھپوری (کامل)‘‘ کو ایک بسیط مقدمے کے ساتھ شائع کیا گیا ہے، جس میں فراؔق کا زندگی نامہ، ان کے فن کا تجزیہ اور مشاہیر شعر و ادب کی آرا شامل ہیں جو عامی و عالم کے لیے سُودمند اور قاری اور اسکالر کے لیے تحقیقی و تنقیدی نکات کی حامل ہیں۔ اس کلیات میں متن کی صحت اور تصدیق تمام مستند اوریجنل نسخوں سے کی گئی ہے۔ فراؔق نے کہا تھا ...

آنے والی نسلیں تم پر رشک کریں گی، ہم عصرو!!
جب یہ دھیان آئے گا اُن کو تم نے فراؔق کو دیکھا ہے


فراقؔ کے نشتر

اُردو کے ممتاز اور معروف شاعر رگھوپتی سہائے فراقؔ کا ذکر اس لیے بھی ضروری ہے کہ علمائے شعر و ادب نے انھیں بیسویں صدی کی غزل کا امام، مسیحا اور محسن قرار دیا ہے۔ فراقؔ نے چوں کہ روایتی غزل سے رشتہ برقرار رکھتے ہوئے ترقی پسند دور کی غزلوں، جدید اور مابعد جدید غزلوں کا بھی ساتھ دیا اور غزل کی شاعری پر کئی پر مغز مضامین لکھے اور کار آمد مشوروں سے نوازا اور تنقید میں اپنی تصانیف سے غزل کے گلشن کو سنورا ہم ان کے شعری کلام سے جو رباعیوں نظموں اور غزلوں پر مشتمل ہے صرف کچھ بطور نمونے اشعار پیش کریں گے:

یہ مانا زندگی ہے چار دن کی
بہت ہوتے ہیں یارو چار دن بھی
۔۔۔۔۔۔
میں ہوں دل ہے تنہائی ہے
تم بھی ہوتے اچھا ہوتا
۔۔۔۔۔۔
ایک مدت سے تری یاد بھی آئی نہ ہمیں
اور ہم بھول گئے ہوں تجھے ایسا بھی نہ تھا
۔۔۔۔۔۔
اک عمر کٹ گئی ہے ترے انتظار میں
ایسے بھی ہیں کہ کٹ نہ سکی جن سے ایک رات
۔۔۔۔۔۔
ہزار بار زمانہ ادھر سے گزرا ہے
نئی نئی سی ہے کچھ تیری رہ گزر پھر بھی
۔۔۔۔۔۔
شام بھی تھی دھواں دھواں حسن بھی تھا اُداس اُداس
دل کو کئی کہانیاں یاد سی آکے رہ گئیں
۔۔۔۔۔۔
دلوں کو تیرے تبسّم کی یاد یوں آئی
کہ جگمگا اٹھیں جس طرح مندروں میں چراغ
۔۔۔۔۔۔
اس دور میں زندگی بشر کی
بیمار کی رات ہوگئی ہے
۔۔۔۔۔۔
غرض کہ کاٹ دیئے زندگی کے دن اے دوست
وہ تیری یاد میں ہوں یا تجھے بھلانے میں
۔۔۔۔۔۔
بہت دنوں میں محبّت کو یہ ہوا معلوم
جو تیرے ہجر میں گزری وہ رات رات ہوئی
۔۔۔۔۔۔
بہت پہلے سے ان قدموں کی آہٹ جان لیتے ہیں
تجھے اے زندگی ہم دور سے پہچان لیتے ہیں
۔۔۔۔۔۔
اب یادِ رفتگاں کی بھی ہمّت نہیں رہی
یاروں نے کتنی دور بسائی ہیں بستیاں
۔۔۔۔۔۔
زندگی کیا ہے اس کو آج اے دوست
سوچ لیں اور اُداس ہو جائیں
۔۔۔۔۔۔
جو بھولتی بھی نہیں یاد بھی نہیں آتیں
تری نگاہ نے کیوں وہ کہانیاں نہ کہیں
۔۔۔۔۔۔
ذرا وصال کے بعد آئینہ تو دیکھ اے دوست
تیرے جمال کی دوشیزگی نکھر آئی
۔۔۔۔۔۔
مرے آغوش سے اٹھ کر کبھی آئینہ دیکھا ہے
سحر کو اور بڑھ جاتی ہے کچھ دوشیزگی تیری
۔۔۔۔۔۔
یہ وہ پردہ ہے جو دوشیزگی کو اور چمکا دے
سیہ کاری سے حُسن، آلودۂ عصیاں نہیں ہوتا
۔۔۔۔۔۔
طبیعت اپنی گھبراتی ہے جب سنسان راتوں میں
تو ایسے میں تری یادوں کی چادر تان لیتے ہیں
۔۔۔۔۔۔
دیکھ رفتارِ انقلاب فراقؔ
کتنی آہستہ اور کتنی تیز
۔۔۔۔۔۔
کچھ قفس کی تتلیوں سے چھن رہا ہے نور سا
کچھ فضا کچھ حسرتِ پرواز کی باتیں کرو
۔۔۔۔۔۔
ہرلیا ہے کسی نے سیتا کو
زندگی ہے کہ رام کا بن باس
۔۔۔۔۔۔
کچھ آدمی کو ہیں مجبوریاں بھی دُنیا میں
ارے وہ دردِ محبّت سہی تو کیا مرجائیں
۔۔۔۔۔۔
یوں ہی فراقؔ نے عمر بسر کی
کچھ غم جاناں، کچھ غم دوراں
۔۔۔۔۔۔
یوں ہی سا تھا کوئی جس نے مجھے مٹا ڈالا
نہ کوئی نور کا پتلا نہ کوئی زہرہ جبیں
۔۔۔۔۔۔
تو مخاطب بھی ہے قریب بھی ہے
تجھ کو دیکھوں کہ تجھ سے پیار کروں
۔۔۔۔۔۔
ہم سے کیا ہو سکا محبّت میں
تو نے تو خیر بےوفائی کی
۔۔۔۔۔۔
اب دورِ آسماں ہے نہ دورِ حیات ہے
اے دردِ ہجر تو ہی بتا کتنی رات ہے
۔۔۔۔۔۔
اس پرسشِ غم پہ تو آنسو نکل پڑے
کیا تو وہی خلوص سراپا ہے آج بھی
۔۔۔۔۔۔
وفا تو سنتے ہیں دُنیا سے مٹ گئی لیکن
دلوں میں آج تک اک نقش سا ابھرتا ہے
۔۔۔۔۔۔
اب اس کو کفر مانیں یا بلندیٔ نظر جانیں
خدائے دو جہاں کو دے کے ہم انسان لیتے ہیں
۔۔۔۔۔۔
موت کا بھی علاج ہو شاید
زندگی کا کوئی علاج نہیں
۔۔۔۔۔۔
نرگستان ہے یا غزلستان
سر سے پا تک ترا خمار بدن
۔۔۔۔۔۔
قوت خیر و شر کے ہاتھوں سے
شاعری بھی سمندر متھن ہے
۔۔۔۔۔۔
مردِ حق پیشہ کو پھر دار ورسن پر کھینچا
اک چراغ اور بجھا ایک ستوں اور گرا
۔۔۔۔۔۔
تیرہ بختی نہیں مٹتی دل سوزاں کی فراقؔ
شمع کے سر پہ وہی آج دھواں ہے کہ جو تھا
۔۔۔۔۔۔
مومنو لاکھ جنّتیں قرباں
ایک بچّے کی مسکراہٹ پر
۔۔۔۔۔۔
تو مجھ کو نہ بھولا دل سے مگر میرا نہ ہوا، میرا نہ ہوا
میں تجھ کو بھلا کر بھی پیارے تیرا ہی رہا، تیرا ہی رہا
۔۔۔۔۔۔
یوں سمجھ رکھا تھا گویا بھول بیٹھے ہیں تجھے
رات تیری یاد سے دل میں وہ درد اٹھا کہ بس
۔۔۔۔۔۔
دل دکھے روئے ہیں شاید اس جگہ اے کوئے دوست
خاک کا اتنا چمک جانا ذرا دشوار تھا
۔۔۔۔۔۔
بس ایک تمہاری خواہش تھی وہ بھی مجھ سے پوری نہ ہوئی
تم کہتے تھے مجھ کو بھول جاؤ میں تم کو بھولنا بھول گیا
۔۔۔۔۔۔
آنسو کے ہر قطرے میں
سیر دو عالم ہوتی ہے
۔۔۔۔۔۔
تھے خزانے بھرے دو عالم کے
ایک آنسو جو مول لے نہ سکے
۔۔۔۔۔۔
کوہِ گرانِ غم کے اٹھانے کا ہے سوال
لوگ آئے جوق جوق دلِ ناتواں کے پاس
۔۔۔۔۔۔
چھلک کے کم نہ ہو ایسی کوئی شراب نہیں
نگاہِ نرگس رعنا ترا جواب نہیں
۔۔۔۔۔۔
پال لے اک روگ ناداں زندگی کے واسطے
صرف صحت کے سہارے زندگی کٹتی نہیں
۔۔۔۔۔۔
تجھے پا کے خود کو میں پاؤں گا کہ تجھی میں کھویا ہوا ہوں میں
یہ تری تلاش ہے اس لیے کہ مجھے ہے اپنی ہی جستجو
۔۔۔۔۔۔
یہ سکوتِ ناز پہ دل کی رگوں کا ٹوٹنا
خامشی میں کچھ شکستِ ناز کی باتیں کرو
۔۔۔۔۔۔
خانہ زادِ حیات ہے وہ بھی
موت بھی زیست کی ہے دست نگر
۔۔۔۔۔۔
غم سے چھٹ کر یہ غم ہے مجھ کو
کیوں غم سے نجات ہوگئی ہے
۔۔۔۔۔۔
یوں تو بھری دُنیا ہے لیکن
دُنیا میں ہر اک تنہا ہے
۔۔۔۔۔۔
کبھی ہوسکا تو بتاؤں گا تجھے رازِ عالم خیر و شر
کہ میں رہ چکا ہوںشروع سے گہے ایز دو گہے اہرمن
۔۔۔۔۔۔
انسان کو خریدتا ہے انساں
دُنیا بھی دکان ہو گئی ہے
۔۔۔۔۔۔
جب تک نہ ہو ضمیر کی لو
آنکھ کو روشنی نہیں ملتی
۔۔۔۔۔۔
جب جب اُسے سوچا ہے دل تھام لیا میں نے
انسان کے ہاتھوں سے انسان پہ کیا گذری
۔۔۔۔۔۔
حاصلِ حسن و عشق بس ہے یہی
آدمی آدمی کو پہچانے
۔۔۔۔۔۔
یہی مقصد حیاتِ عشق کا ہے
زندگی زندگی کو پہچانے
۔۔۔۔۔۔
ہم ترے حورو پری ہونے پر مسرور نہیں
ہمیں درکار ہے انسان کا انساں ہونا
۔۔۔۔۔۔
عرش سے ہے بلند یوں تو بشر
ایک مشتِ غبار ہے اے دوست
۔۔۔۔۔۔
آج بہت اُداس ہوں
یوں بھی کوئی غم نہیں
۔۔۔۔۔۔
نہ سمجھنے کی یہ باتیں ہیں نہ سمجھانے کی
زندگی اچٹی ہوئی نیند ہے دیوانے کی
۔۔۔۔۔۔
کہاں کا وصل تنہائی نے شاید بھیس بدلا ہے
ترے دم بھر کے آجانے کو ہم بھی کیا سمجھتے ہیں
۔۔۔۔۔۔
مرے شعر آنسوؤں میں عالم کی
کہہ گئے ہیں کہانیاں کیا کیا
۔۔۔۔۔۔
شب ہجر کی تھی یوں تو مگر پچھلی رات کو
وہ درد اٹھا فراقؔ کہ میں مسکرا دیا
۔۔۔۔۔۔
جہاں میں تھی بس اک افواہ تیرے جلوؤں کی
چراغِ دیر و حرم جھلملائے ہیں کیا کیا
۔۔۔۔۔۔
بڑا آدمی وہی ہے یارو
جس کو چھوٹا بنّا آئے
۔۔۔۔۔۔
نہیں صدائے اناالحق میں اب کوئی خطرہ
انا البشر کے ہیں نعرے پیامِ دار و رسن
۔۔۔۔۔۔
آدمی تو ہیں بے حساب و شمار
ہے جو قلت تو آدمیت کی
۔۔۔۔۔۔
یہ دونوں کیفیتیں مقصدِ حیات نہیں
غم و خوشی کے لیے آدمی کی ذات نہیں
۔۔۔۔۔۔
جس کا مقصد ہو بس جیئے جانا
وہ کوئی زندگی نہیں ہوتی
۔۔۔۔۔۔
کاوشِ دوزخ و خلد عبث ہے
پہلے انسان ہولے انساں
۔۔۔۔۔۔
بس وہ بھرپور زندگی ہے فراقؔ
جس میں آسودگی نہیں ملتی
۔۔۔۔۔۔
دام نادار لگائیں گے نئی دُنیا کا
اہلِ دولت سے تو اے چرخ یہ سودا نہ پٹا
۔۔۔۔۔۔
آدمیوں سے بھری ہے یہ بھری دُنیا مگر
آدمی کو آدمی ہوتا نہیں ہے دستیاب
۔۔۔۔۔۔
شیخ جی بن گئے فرشتہ صفات
آدمیت سے ہاتھ دھو بیٹھے
۔۔۔۔۔۔
شیخ و واعظ میں صلاحیت گناہوں کی بھی تھی
ان فرشتوں کو بھی تو انساں بنا سکتے تھے ہم
۔۔۔۔۔۔
رات بھی نیند بھی کہانی بھی
ہائے کیا چیز ہے جوانی بھی
۔۔۔۔۔۔
ازل سے تاابد کی ہے کہانی
سناتے ہیں جسے سب درمیاں سے
۔۔۔۔۔۔
ہے سانحۂ تہذیب اُردو کی جلاوطنی
حیرت ہے فراقؔ ابھی ہے شغل سخن جاری
۔۔۔۔۔۔
یوں تو اُداس غم کدۂ عشق ہے مگر
اس گھر میں اک چراغ سا جلتا ہے آج تک
۔۔۔۔۔۔
ہم بیخودانِ عشق بہت شادماں نہیں
لیکن دلوں میں درد سا اٹھتا ہے آج تک
۔۔۔۔۔۔
عشق میں اور نشاط کی اُمید
آستیں میں فراقؔ سانپ نہ پال
۔۔۔۔۔۔
فراقؔ اک اک سے بڑھ کر چارہ ساز درد ہیں لیکن
یہ دُنیا ہے یہاں پر درد کا درماں نہیں ہوتا
۔۔۔۔۔۔
سانچے میں ڈھلے شعر ہیں یا عضو بدن کے
یا فکر نما جسم سراسر غزلستاں
۔۔۔۔۔۔
اک عمر کٹ گئی ہے ترے انتظار میں
ایسے بھی ہیں کہ کٹ نہ سکی جن سے ایک رات
۔۔۔۔۔۔
قباتنگ نے بیسوں جگہ سے لو دے دی
زفرق تابقدم اک دبی سی آگ ہے تو
۔۔۔۔۔۔
مہربانی کو محبّت نہیں کہتے اے دوست
آہ اب مجھ سے تری رنجشِ بے جا بھی نہیں
۔۔۔۔۔۔
خیالِ گیسوئے جاناں کی وسعتیں مت پوچھ
کہ جیسے پھیلتا جاتا ہو شام کا سایا
۔۔۔۔۔۔
فراقؔ دوڑ گئی روح سی زمانے میں
کہاں کا درد بھرا تھا ترے فسانے میں
۔۔۔۔۔۔
میں سرِ عرش بریں ڈھونڈ رہا تھا اس کو
ترے قدموں میں تھی جنّت مجھے معلوم نہ تھا
۔۔۔۔۔۔
تیری محبّت بڑی چیز ہے ہم یہ سوچ کے روتے تھے
اب یہ سمجھ کے روتے ہیں سب رونا دھونا دھوکا ہے
۔۔۔۔۔۔
ترکِ محبّت کرنے والو کون ایسا جگ جیت لیا
عشق سے پہلے کے دن سوچو کون ایسا سکھ ہوتاتھا
۔۔۔۔۔۔
تو ایک تھا مرے اشعار میں ہزار ہوا
اس اک چراغ سے کتنے چراغ جل اٹھے
۔۔۔۔۔۔
جو زہر ہلاہل ہے امرت بھی وہی لیکن
معلوم نہیں تجھ کو انداز ہیں پینے کے
۔۔۔۔۔۔
جاگے ہیں فراقؔ آج غمِ ہجر میں تاصبح
آہستہ چلے آؤ ابھی آنکھ لگی ہے

۔۔۔۔۔۔

ماخوذ: کلیات فراق گورکھپوری (کامل)
تحقیق، تنقید و تدوین: ڈاکٹر سید تقی عابدیORAKHPURI

Pages: 752

Recently Viewed Products

کلیات فراق گورکھپوری

Returns

There are a few important things to keep in mind when returning a product you have purchased from Dervish Online Store:

Please ensure that the item you are returning is repacked with the original invoice/receipt.

We will only exchange any product(s), if the product(s) received has any kind of defect or if the wrong product has been delivered to you. Contact us by emailing us images of the defective product at help@dervishonline.com or calling us at 0321-8925965 (Mon to Fri 11 am-4 pm and Sat 12 pm-3 pm) within 24 hours from the date you received your order.

Please note that the product must be unused with the price tag attached. Once our team has reviewed the defective product, an exchange will be offered for the same amount.


Order Cancellation
You may cancel your order any time before the order is processed by calling us at 0321-8925965 (Mon to Fri 11 am-4 pm and Sat 12 pm-3 pm).

Please note that the order can not be canceled once the order is dispatched, which is usually within a few hours of you placing the order. The Return and Exchange Policy will apply once the product is shipped.

Dervish Online Store may cancel orders for any reason. Common reasons may include: The item is out of stock, pricing errors, previous undelivered orders to the customer or if we are not able to get in touch with the customer using the information given which placing the order.


Refund Policy
You reserve the right to demand replacement/refund for incorrect or damaged item(s). If you choose a replacement, we will deliver such item(s) free of charge. However, if you choose to claim a refund, we will offer you a refund method and will refund the amount in question within 3-5 days of receiving the damaged/ incorrect order back.

What are you looking for?

Your cart